urdu maloomat

ہیروں اور جواہرات سے بھیک مانگنے والا بادشاہ

ایک بادشاہ نے اپنی رعایا پر ظلم کرکے بہت سارا خزانہ جمع کر لیا اور اسے شہر سے باہر ایک جنگل میں خفیہ غار میں چھپا دیا غار کے دروازے کی دو چابیاں تھیں۔ایک بادشاہ کے پاس اور دوسری اس کے وزیر کے پاس تھی
ان دو کے علاوہ کسی کو بھی اس غار کا پتہ نہیں تھا ایک دن صبح کے وقت بادشاہ خزانہ دیکھنے کے لیے غار کی طرف گیا اور دروازہ کھول کر اندر داخل ہو گیا خزانہ کمروں میں چاول اور گندم کے اَنبار کی طرح بکھرا پڑا تھا ہیرے اور جواہرات الماری میں سجے ہوئے تھے

بادشاہ اس خزانے کو دیکھ کر بہت خوش ہوا لیکن آتے وقت بادشاہ غار کا دروازہ ہی بند کرنا بھول گیا تھا اسی وقت وزیر کا اس غار کی طرف سے گزر ہوا وزیر نے جب خزانے کا دروازہ کھلا دیکھا تو حیران رہ گیاوہ سمجھا کہ غلطی سے دروازہ کھلا رہ گیا ہے اسی خیال کے تحت اس نے دروازہ باہر سے بند کر دیا اور محل پہنچ کر یہ بات بھول گیا جب بادشاہ ہیرے اور جواہرات کا معائنہ کرنے سے فارغ ہوا تو واپسی کا سوچا لیکن جب وہ دروازے کی طرف پہنچا تو دیکھا کہ وہ تو بند تھا۔

بادشاہ نے دروازے کو خوب زور زور سے پیٹنا شروع کر دیا اور ساتھ ساتھ چلاتا بھی رہا لیکن اس ویران جنگل میں اس کی آواز سننے والا کوئی نہ تھاوہ واپس اپنے خزانے کی طرف گیا اور ان سے دل بہلانے کی کوشش کرنے لگا لیکن بھوک اور پیاس کے ہاتھوں مجبور ہو کر وہ پھر دروازے کی طرف گیا اس نے چینخنا چِلاّنا شروع کر دیا اور پھر تھک ہار کر وہ واپس اسی جگہ پر آگیا بھوک اور پیاس کی شدت اتنی بڑھ گئی تھی کہ آخر وہ ہیروں سے بھیک مانگنے لگا اے قیمتی پتھر مجھے ایک وقت کا کھانا دے دو اسے ایسا لگا جیسے وہ ہیرے اس کی سادگی پر زور زور سے ہنس رہے ہوں اس نے ایک ہیرا اٹھایا اور زور سے دیوار پر مارا پھر موتیوں سے اپنی فریاد کرنے لگا اے قیمتی موتیوں مجھے ایک گلاس پانی دے دو اسے ایسا لگا کہ موتی اور جواہرات اس پر ہنس رہے ہوں بادشاہ کو بہت غصہ آیا لیکن بھوک غصے پر غالب آگئی آخر بھوک کی شدت اتنی بڑھ گئی کہ وہ نڈھال ہونے لگا اس نے دنیا کو پیغام دینے کے لیے زمین پر کچھ لکھا اس کے بعد بادشاہ کا انتقال ہو گیا وزیر بادشاہ کو تلاش کرتا ہوا اس غار کی طرف سے گزرا تو اس نے سوچا کہ بادشاہ کے خزانے کا کچھ اَتا پتہ کریں جب وہ غار کے اندر داخل ہوا تو دیکھا کہ بادشاہ مرا پڑا ہے اور زمین پر لکھا ہےدولت کسی کو زندگی نہیں دے سکتی

Show More

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button